A+ R A-
23 ستمبر 2017
RSS Facebook Twitter Linkedin Digg Yahoo Delicious

Ads1

ماسکو (نیوز ڈیسک) کیا یہ خلائی مخلوق کا کام ہے، زمین کے اندر کوئی بہت بڑا دھماکہ ہوا ہے یا پھر آسمان سے کوئی شہاب ثاقب گر اہے؟ یہ وہ سوالات ہیں جو زمین کے انتہائی شمال میں واقع بے آب و گیاہ برف کے صحرا سائبیریا میں سینکڑوں فٹ قطر کا سوراخ نمودار ہونے پر پوچھے جارہے ہیں۔ دنیا بھر کے سائنسدان حیران ہیں کہ آخر زمین میں اتنا بڑا سوراخ کیسے ہوگیا، اس کی گہرائی کتنی ہے اور آخر اس کے اندر کیا ہے؟ فضا سے لی گئی تصاویر ظاہر کرتی ہیں کہ سائبیریا کے علاقے یمال میں تقریباً 262 فٹ قطر کا خوفناک چوڑائی اور گہرائی والا سوراخ ہوچکا ہے۔ سائبیریا کا علاقہ روس کے شمال میں واقع ہے اور اس علاقے کے انتہائی شمال میں یمال کا علاقہ واقع ہے جو دنیا کی دور افتادہ ترین جگہ سمجھی جاتی ہے اور اسی لئے اسے ”دنیا کا آخری کونہ“ کہا جاتا ہے۔ یہ علاقہ قدرتی گیس کی پیداوار کیلئے بہت مشہور ہے اور یہاں روسی پائپ لائنوں کے علاوہ زندگی کے کوئی آثار نہیں نہیں۔ بعض ماہرین کا خیال ہے کہ زمین کے نیچے گیسوں کے جمع ہوجانے کے بعد دھماکہ ہوا ہے تو بعض کا خیال ہے کہ گلوبل وارمنگ کے نتیجے میں درجہ حرارت بڑھنے سے یہ سوراخ ہوگیا ہے، ابھی تک کوئی بھی حتمی وجہ سامنے نہیں آئی ہے اور سائنسدانوں کی ایک ٹیم کو تحقیقات کیلئے علاقے کی طرف روانہ کردیا گیا ہے۔

چارسده فیس بک پر لائک کریں

چارسده فوٹو گیلری

Advertisement